پاکستان کی معروف اداکارہ فریحہ الطاف نے بچپن میں گھر کے خانسامے کی جانب سے جنسی زیادتی کیے جانے کا انکشاف کر دیا


پاکستان کی معروف ماڈل و اداکارہ فریحہ الطاف نے انکشاف کیا ہے کہ بچپن میں اسے والدین کی غیر موجودگی میں ایک بنگلہ دیشی خانسامے نے جنسی زیادتی کا نشانہ بنایا۔ ان کا کہنا ہے کہ  دو ہفتے بعد ان کے والدین گھر واپس آگئے لیکن اس کے بعد بھی یہ معامہ چلتا رہا اور پھر انہوں نے اپنی والدہ کو بتا دیا جس پر ملزم کو پولیس کے حوالے کیا گیا اور بعد میں اسے ڈی پورٹ کر دیا گیا۔ 
معروف ماڈل و اداکارہ فریحہ الطاف نے  اپنے ایک انٹرویو کے دوران بتایا ہے کہ 1970 میں ایک دفعہ ان کے والدین جاپان میں چھٹیوں پر گئے تھے اور انہیں ان کے کزنز کے ساتھ گھر چھوڑ گئے تھے۔ ہم جار بہن بھائی ہیں اور میں سب سے بڑی ہوں اور اس وقت میری عمر 6 سال کی قریب تھی۔ ہمارے گھر میں ایک بنگالی ملازم تھا جو ہمارہ کک تھا۔ اس وقت بچوں کو کچھ پتا نہیں ہوتا تھا اور نہ ہی والدین کچھ بتاتے تھے جس بات کا فائد اس ملازم نے اٹھایا۔ میرے والدین جب ملک سے باہر گئے اور جو ہمارے ساتھ کزنز تھے وہ اتے میچور نہیں تھے اور ان کو اتنا علم نہیں تھا۔ اس شخص نے میرے ساتھ جو کیا میں بتا نہیں سکتی۔ والدین 2 ہفتے تک نہیں تھے تو یہ چیز چلتی رہی لیکن جب وہ آ گئے تو اس وقت وہ بہت بولڈ ہو گیا تھا اور یہ چیز پھر بھی چلتی رہی۔ 
ان کا کہنا ہے کہ میں نے امی کو اس کے بارے میں بتادیا تو پھر اس کو پولیس کے حوالے کیا گیا اور بعد میرے اس بارے میں بتانے کا یہ بھی فائدہ ہوا کہ ہمسائے گھر میں بھی ایک بنگالی ملازم تھا جو ان کی لڑکی کے ساتھ یہی عمل کرتا تھا وہ بھی پکڑا گیا اور پھر بعد میں دونوں کو ڈی پورٹ بھی کر دیا گیا تھا۔

پاکستان کی معروف اداکارہ فریحہ الطاف نے بچپن میں گھر کے خانسامے کی جانب سے جنسی زیادتی کیے جانے کا انکشاف کر دیا پاکستان کی معروف اداکارہ فریحہ الطاف نے بچپن میں گھر کے خانسامے کی جانب سے جنسی زیادتی کیے جانے کا انکشاف کر دیا Reviewed by Admin on اپریل 19, 2020 Rating: 5